13

ادویات کی قیمتوں میں اضافہ ڈریپ کی کاکردگی پر سوالیہ نشان ہے؟محمد اختر بٹ

ملتان(سٹاف رپورٹر)پاکستان کیمسٹ اینڈ ڈرگسٹ ایسوسی ایشن کے ڈویژنل محمد اختر بٹ نے تحریری بیان میں کہا کے ادویات کی قیمتوں میں 2018کے بعد 200سے 300فی صد تک اضافہ ہوا اور کام رکا نہیں اب بھی ادویات 50فی صد تک مہنگی ہونا شروع ہوگئی ہیں،(Drap )
ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی پاکستان نے قیمتوں کو کنٹرول کرنا ہوتا ہے،قیمتوں کا آسمانوں کو چھونا ڈریپ کی کاکردگی پر سوالیہ نشان ہے؟ عوام کے ساتھ ظلم کے مترادف ہے اور صوبائی چیف ڈرگ کنٹرولرز نے کمپنیوں کی من مانی قیمتوں کو مارکیٹ سے چیک کرنا ہوتا ہے،جو ڈریپ کی منظوری کے بغیر قیمتوں کو 200سے 300 فی صد بڑھا کر مارکیٹ میں ڈسٹری بیوٹر اور ریٹیلرز میڈیکل سٹور فارمیسیز کو دی جارہی ہیں اور ڈرگ انسپکٹرز کا کام ہے اس فارما کمپنی کے خلاف کاروائی کریں جو ڈریپ سے قیمتیں منظور کروائے بغیر بڑھا رہی ہیں عوام کو سستی ادویات کی فراہمی کروانے کیلئے یہ گورنمنٹ کے ادارے جواب دہ ہیں لیکن اس مسئلے پر ایکشن نہ لینا اور خاموشی سوالیہ نشان ہے ،اورفارما کمپنیاں 50فی صد قیمتیں بڑھانے کیلئے ساز باز کر رہی ہیں اور ہر طرف خاموشی نظر آرہی ہے،لیکن یہاں چیف ڈرگ کنٹرولر نے ایک لیٹر لکھ کر اس عوامی مسئلے کا رخ ایک چھوٹے سے مسئلے ریٹیلرز کی طرف کردیا ہے کوالیفائیڈ پرسن کی سپرویژن میں میڈیسن کی فروخت کی جائے اچھا اقدام ہے لیکن اس میں تو آٹو میٹک بہتری آرہی ہے اس کاروبار سے وابستہ لوگ فارمیسی کالجز میں داخلے لیکر کر تیزی سے کوالیفائیڈ ہو رہے ہیں اور اب میڈیسن سروس فراہم کرنے میں ان کوالیفائیڈ فارمیسی اسسٹنٹ،فارمیسی ٹیکنیشن ،اور فارماسسٹ ،کی تعداد میں آئے دن اضافہ ہورہا ہے اور اسی طرٹ بہتری آ جائے گی،لیکن عوام کی چمڑی میڈیسن کی بے ضابطہ قیمتیں بڑھا کر اتاری جارہی ہے عوام سے جینے کا حق چھینا جارہا ہے ان فارما کمپنیوں کے خلاف ڈائریکٹ کارروائی کرنے سے ڈریپ اور چیف ڈرگ کنٹرولر کیوں خاموش ہیں اس پر کب ایکشن لیا جائے گا اور کب بے آسرا عوام کو اس دلدل سے نکالا جائے گا ڈریپ اور چیف ڈرگ کنٹرولر یہ اہم زمہ داری کب ادا کریں گے
اور کب حقیقی کاروائی اس فارما مافیاز کے خلاف کریں وزیر اعظم عمران خان صاحب آپ سے گزارش ہے ادویات کی قیمتوں کا بے لگام بڑھنا نہ صرف عوام کی زندگیوں کے لیے خطرناک ہے بلکہ ملک کی تاریخی تباہی کے مترادف ہے، یہی حقائق ہیں بہت سے ایسے لوگ جن کی لوٹ مار کی داستانیں پوشیدہ ہیں ان لوگوں کو اس طرح کے حقائق جو اوپر بیان کیے گئے ہیں ہضم نہیں ہوں گے اور وہ ادویات کی قیمتوں پر سب اچھا کی رپورٹ دیں گے ایسے نوسر بازوں کی باتوں پر کان نہ دھریں بالکہ عملی مارکیٹ کا جائز ہ لیں تو پتا چلے گا کیسے عوام کے ساتھ ظلم ہورہا ہے.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں