10

اعلیٰ حکام جھوٹی ایف آئی آر سے نام خارج کراکے تحفظ فراہم کریں،محمد عظیم

ملتان(سٹاف رپورٹر)پرانا شجاع آباد روڈ کے علاقہ لیاقت آباد کے رہائشی محمد عظیم نے بیرسٹر حسن طارق، حماد قریشی، اویس عرف سدا، راشد پہلوان، ملک واصف، کشف خان کے ہمراہ پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ پرانا شجاع آباد روڈ کے علاقہ میں ہونے والے دونوں گروپوں فرحان نذیرعرف کاکو شاہ،عبد اللہ، عابد ودیگر اور شہباز میتلا، سجاول کے درمیان آپس میں چپقلش کے نتیجے میں فائرنگ کے باعث پانچ ستمبر کو شہری قمر محمود بھٹہ جاں بحق ہو گیا،جبکہ سرفراز آباد کے علاقہ میں بھی مذکورہ گروپوں کے درمیان فائرنگ کے نتیجے میں دس سالہ معصوم بچہ محمد کیف زخمی ہوا میرا ان واقعات سے کوئی تعلق یا واسطہ نہ ہے پہلے وقوع کے موقع پر میں اپنے ڈیرہ مظفر آباد جبکہ دوسرے وقوع کے موقع پر شیر شاہ کے علاقہ میں موجود تھا جس کی گواہی علاقہ مکین دے سکتے ہیں،لیکن تھانہ قطب پور پولیس نے میرا نام بلاوجہ ایف آئی آرز میں درج کردیا ہے اور تھانہ قطب پور پولیس مجھے اور میرے اہلخانہ کو بلاوجہ حراساں و پریشان کر رہی ہے،جبکہ تھانہ قطب پور پولیس مجھے پولیس مقابلے میں مارنے کی دھمکیاں بھی دے رہی ہے،اگر مجھے یا میرے اہلخانہ کو کچھ ہوا تو اس کی ذمہ دار تھانہ قطب پور پولیس ہوگی،انہوں نے چیف جسٹس،وزیراعظم، چیف آف آرمی سٹاف، وزیراعلیٰ پنجاب، آئی جی، ایڈیشنل آئی جی، آر پی او، سی پی او ملتان سے مطالبہ کیا ہے کہ مذکورہ ایف آئی آر ز سے میرانام فی الفور خارج کیا جائے،مجھے اور میرے اہلخانہ کو جان و مال کا تحفظ فراہم کیا جائے،دریں اثناءمحمد عظیم کی قیادت میں اہلیان علاقہ نے پریس کلب کے سامنے احتجاجی مظاہرہ بھی کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں