7

افغان سفیرکی صاحبزادی کیس کومنطقی انجام تک پہنچانےکیلئے تعاون کریں،وزیرخارجہ شاہ محمود

ملتان(رائو نعمان سے)وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ افغان سفیر کی بیٹی کے مبینہ اغوا کی مکمل تحقیقات کی جا رہی ہیں،اداروں نے فوٹیج حاصل کی اور 250 سے زیادہ لوگوں سے پوچھ گچھ کی، اس تحقیقات کو منطقی انجام تک پہنچانے کیلئے افغان سفیر اور ان کی بیٹی کا تعاون درکار ہے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملتان میں نماز عید کے بعد میڈیا سے بات چیت کے دوران کیا،شاہ محمود قریشی نے کہا کہ افغان حکومت سے گزارش کی کہ سفیر واپس بلانے کے معاملے پر نظر ثانی کرے۔ اس وقت افغانستان نازک صورتحال سے گزر رہا ہے ایسے میں افغان سفیر کی واپسی مناسب نہیں ہایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ افغان مسئلے پر زلمے خلیل زاد کو صرف جو بائیڈن نے ذمہ داری سونپی ہے،ناموافق حالات کے باوجود وزیراعظم عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی سے ملاقات کی۔ ہم افغانستان کے تمام ہمسایوں سے بھی بات چیت کر رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ افغانستان کے مسئلے پر مذاکرات کے سلسلہ میں نشست صدر اشرف غنی کی مصروفیات کے باعث ملتوی کی گئی۔ افغانستان کے مسئلے پر بھارت کا منفی رویہ افسوس ناک ہے اور یہ اس خطے کے استحکام کے لئے مناسب نہیں ہے۔ بھارت امن کے عالمی ایجنڈے کی خلاف ورزی کر رہا ہے،مخدوم شاہ محمودقریشی نے کہاکہ فیٹف نے کہا ہے کہ پاکستان 27 میں سے 26 نکات پر عمل کر چکا ہے۔ دنیا پاکستان کے کردار کی تائید کر رہی ہے لیکن بھارت رخنے ڈال رہا ہے،ان کا کہنا تھا کہ انڈین وزیر خارجہ جے شنکر اعتراف کر چکے ہیں کہ ہم نے پاکستان کو فیٹف کی گرے لسٹ میں رکھوانے کی کوشش کی، بھارت کو عالمی سطح پر مسلسل ناکامی کاسامنا ہے۔شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ بھارت مقبوضہ جموں وکشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث ہے، عالمی برادری کو اس کا نوٹس لینا چاہیے،بھارت امن کے عالمی ایجنڈے میں رکاوٹ ہے اور افغانستان کی زمین استعمال کرنا چاہتا تھا۔ ہم ان قوتوں کو بے نقاب کریں گے جو چین اور پاکستان کے تعلقات متاثر کرنا چاہتے ہیں،شاہ محمود قریشی نے مزید کہاکہ میں کل چین روانہ ہو رہا ہوں، ایک دو روز میں اہم رہنماوں سے ملاقاتیں ہوں گی، دشمن سی پیک کو متنازع بنانے کے لیے افواہیں پھیلاتے ہیں۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ داسو ڈیم کے حوالہ سے افواہیں پھیلائی جا رہی ہیں۔داسو ڈیم واقعے پر شدید دکھ ہے تحقیقات کا عمل جاری ہے۔چین اور پاکستان داسو کے معاملہ پر مل کر کام کر رہے ہیں ۔سی پیک کسی صورت متاثر نہیں ہوگا،آزاد کشمیر الیکشن سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہ اپوزیشن کے تحفظات کا اظہار سمجھ سے بالا ترہے، آزاد کشمیر کی انتظامیہ مسلم لیگ ن کے وزیراعظم کو جوابدہ ہے ، آزاد کشمیر میں ن لیگ حکومت کے سیٹ اپ میں ہی انتخابات ہو رہے ہیں، دھاندلی کے خدشات کا اظہار مسلم لیگ ن کا آزاد کشمیر حکومت پر عدم اعتماد ہے۔انہوں نے کہاکہ پاکستانی قیدیوں کی رہائی پر سعودی حکومت کے شکر گزار ہیں۔افواہ تھی کہ پاک سعودی تعلقات خراب ہوئے جبکہ ایسا نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں