10

انٹرویو، ٹیسٹ کے بغیر بھر تیاں کرکے ریلوے کا بیڑا غرق کر دیا،سپریم کورٹ

اسلام آباد،سپریم کورٹ نے ریلوے کے 17 گریڈ کے 15 ٹیکنیکل کنٹریکٹ افسروں کو ایف پی ایس سی ٹیسٹ کوالیفائی کرنے کا حکم دے دیا،چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے سماعت کی،جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ سپریم کورٹ کے کئی فیصلے موجود ہیں جس میں 16 گریڈ سے اوپر کی پوسٹ پر ایف پی ایس سی ٹیسٹ پاس کرنا لازمی ہے،آپ کے اندر قابلیت ہے تو جا کر ایف پی ایس سی کوالیفائی کریں،پہلے بھی بغیر ٹیسٹ انٹرویو بھرتیاں کر کے پاکستان ریلوے کا بیڑا غرق کر دیا گیا ہے،ملازمین کے وکیل نے کہا گیارہ سال سے نوکری کر رہے ہیں، ٹیسٹ کوالیفائی کرنا مشکل ہوجاتا ہے،میں کئی سالوں سے سپریم کورٹ کا وکیل ہوں اور اگر آج ایل ایل بی کا امتحان دینا ہوا تو پاس کرنا مشکل ہوگا، 28 جولائی کو ایف پی ایس سی ٹیسٹ کا شیڈول ہے عدالت ہمیں تیاری کیلئے وقت دے۔ جس پر چیف جسٹس نے کہا آپ 17 گریڈ میں ہیں اور بیسک ٹیسٹ دینے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا ریلوے میں جس طرح پہلے نوکریوں کی بندر بانٹ کی گئی اس کے حالات آپ کے سامنے ہیں،سرکاری اداروں میں اب کوئی بغیر ٹیسٹ انٹرویو مستقل نہیں ہوسکتا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں