7

حکومت پراپرٹی ٹیکس میں 300 فیصد تک اضافہ کے فیصلہ پر نظر ثانی کرے،خواجہ محمد حسین

ملتان(سٹاف رپورٹر)ایوان تجارت و صنعت ملتان کے صدر خواجہ محمد حسین نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت پراپرٹی ٹیکس میں 300فیصد تک اضافہ کے فیصلہ پر نظر ثانی کرے،کورونا لاک ڈاؤن اوردیگر معاشی مسائل کا شکار ہے، تاجر ہوشربا اضافی شرح سے بڑھا پراپرٹی ٹیکس ادا نہیں کرسکتے،جو حکومت کے ایز آف ڈوئنگ بزنس پالیسی کے خلاف ہے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایم سی سی آئی میں چیمبر آف سمال ٹریڈرز کے وفد سے ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا،وفد میں صدر چیمبر آف سمال ٹریڈرز ملتان شہر ظفراقبال صدیقی چیئرمین جنوبی پنجاب،مرزا اعجاز علی چیئرمین، احتشام الحق چیئرمین ضلع ملتان،طارق کریم چوہدری شامل تھے،انہوں نے خواجہ محمد حسین کو ایوان تجارت و صنعت ملتان کا صدر منتخب ہونے پر انہیں مبارکباد دی،اور گلدستہ بھی پیش کیا،جبکہ شیخ فہیم ستاراور سیکرٹری جنرل محمد شفیق بھی اس موقع پر موجود تھے،وفد نے خواجہ محمد حسین سے کاروباری حالات ٹیکسیشن اور دیگر مسائل پر تبادلہ خیال کیا،جن میں انکم ٹیکس ریٹرن،پنجاب ریونیو اتھارٹی پی او ایس اور پی ایچ اے شامل تھے،وفد نے پنجاب حکومت کی جانب سے پراپرٹی ٹیکس کی شرح میں 300فیصد تک اضافہ کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا،ظفر اقبال صدیقی نے خواجہ محمد حسین کو پوائنٹ آف سیلز میں جبری رجسٹریشن کے بارے میں بھی تفصیلی گفتگو کی،صدر ایوان خواجہ محمد حسین نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تاجربرادری کو ٹیکسز کے درپیش مسائل اور تحفظات۔شکایات اور تجاویز کو اعلیٰ حکام تک پہنچائیں گے اور ان ایشوز پر 15 روز بعد باقاعدہ میٹنگ کرکے لائحہ عمل مرتب کریں گے،انہوں نے پراپرٹی ٹیکس کی شرح میں 300فیصد اضافہ کو بھی مسترد کرتے ہوئے پنجاب حکومت سیکرٹری ایکسائز سے مطالبہ کیا کہ اس مسئلہ کی جانب توجہ دی جائے اور تاجربرادری کے تحفظات دور کئے جائیں.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں