8

خانیوال انٹر سٹی روڈ منصوبے میں کروڑوں روپے کی بدعنوانی ایک ٹھیکہ 4 جگہ فروخت

خانیوال(نمائندہ پی این این اردو)محکمہ ہائی وے خانیوال کرپشن کا ایک اور سکینڈل سامنے آگیا،انٹرسٹی روڈ کی تعمیر میں سنگین مالی بدعنوانی کا انکشاف،تفصیلات کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے خانیوال کیلئے 4 کلومیٹر طویل انٹرسٹی دو رویہ سڑک کیلئے 9 کروڑ روپے کی گرانٹ جاری کی گئی،مگر جب ٹھیکہ دینے کی باری آئی تو ھائی وے کے افسران نے بھاری کمیشن لیکر خانیوال کے لوکل ٹھیکے داروں کو بائی پاس کرکے لاہور کی پارٹی تو نواز دیا،اس ٹھیکے دار کو بھی جب معقول منافع مل گیا تو یہ ٹھیکہ پیٹی ٹھیکے دار کے ہاتھ فروخت کردیا گیا اب تک اس سڑک ٹھیکے کو چار مرتبہ فروخت کیا گیا ہے،ورک آرڈر حاصل کرنے والی یہ چوتھی کمپنی ہے، ٹھیکہ ایک سے دوسرے ٹھیکے دار تک فروخت ہونے کی وجہ سے منصوبہ تاخیر کا شکار ہوگیا،جس کی وجہ سے لیبر اخراجات ، ڈیزل کی قیمت ، ریت بجری اور تارکول سمیت دیگر میٹریل کی چیزیں بھی 20؛ فیصد تک مہنگی ہو گئی ہیں،ذرائع کے مطابق روڈکی ٹوٹل لمبائی 4.17 کلومیٹر ہے،حسب عادت اس منصوبے میں بھی غیر میعاری میٹریل استعمال کیا جارہا ہے،جبکہ سڑک کے اوپر سڑک بنائی جارہی ہے۔،بستی چن شاہ کے قریب روڈ ہموار نہ ہونے کی وجہ سے جلد ٹوٹ جانے کا خدشہ ہے اردگرد کے سیکڑوں منظور شدہ نقشہ کے مطابق گھروں سے روڈ ڈیڑھ فٹ اونچا ہوگیا ہے،جس سیتیز بارش کی صورت میں پانی گھروں میں داخل ہوگا،ذرائع کے مطابق منظورشدہ تارکول کی بجائے ایرانی تارکول استعمال ہو رہی ہے جبکہ غیر قانونی سپیڈ بریکر بنائے گئے ہیں،جب اس حوالہ سے ایکسین ہائی وے خانیوال سے موقف جاننے کیلئے رابطہ کیا گیا تو کامران اکرم کا کہنا تھا کے وہ خود نگرانی کر رہے ہیں شکایت پر سخت ایکشن ہوگا قومی خزانے کی ایک ایک پائی کا امین ہوں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں