6

خوراک کی ضروریات پوری کرنے کیلئے ’’وزیراعظم زرعی ایمرجنسی ‘‘ متعارف، فخر امام

کبیروالا،پاکستان میں زراعت کی اہمیت کبھی کم نہیں ہو سکتی،زراعت کی اہمیت کا ادراک کرنے اور اس سے متعلق چیلنجوں کا جائزہ لینے کے ساتھ ساتھ موجودہ حکومت نے ’’وزیر اعظم زرعی ایمرجنسی‘‘متعارف کرائی ہے،ان خیالات کا اظہار سید وفاقی وزیر برائے نیشنل فوڈ سیکورٹی اینڈ ریسرچ سید فخر امام نے موضع مولاپور میں سید گروپ کے رہنما اورسابق ناظم یونین کونسل مولاپور مہر مجاہد حسین اُترا کے جوان سالا بیٹے مہرمبین مجاہد اُترا کی وفات پراظہار تعزیت کے موقع پر میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے کیا،انہوں نے کہا کہ زراعت کی ترقی کے لئے وزارت نیشنل فوڈ سکیورٹی اینڈ ریسرچ کو مالی سال 22۔2021ء کے لئے 13 ارب روپے اور ترقیاتی اخراجات کے لئے 12 ارب روپے کے اضافی فنڈز بھی فراہم کئے جائیں گے، ابتدائی طورپر وزارت نیشنل فوڈ سکیورٹی اینڈ ریسرچ کے لئے 12 ارب روپے رکھنے کی تجویز دی جسے بعدازاں بڑھا کر 25 ارب روپے کر دیا گیا،سید فخرامام نے اپنے حلقہ انتخاب کی مختلف یونین کونسلوں کا دورہ کرنے کے دوران دارالمحرم میں میاں معصب عبداللہ سرگانہ کے والد ،خانیوال میں ملک محمد اصغرایڈووکیٹ،کرم پور جوتہ میںمہر محمد رفیق جوتہ کے بھائی ،موضع سرفراز پور میں کونسلر چوہدری محمد ہدایت،چک حیدر آباد میں مہر محمد اقبال مٹ کے بیٹے ،موضع گھگھرمیںمہر محمد رفیق کچھی کی وفات پر ان کی رہائشگاہوں پر جاکر لواحقین سے اظہارتعزیت کیا اور مرحومین کے فاتحہ خوانی کی ،کنڈ سرگانہ میں چوہدری محمد امجد کے والد،چوہدری نذیراحمد کے کزن کی نمازجنازہ میں شرکت کی علاوہ ازیں موضع سرفراز پور میں جابر خان ڈب کے بیٹے کی شادی کی مبارکباددی اورکرم پور جوتہ میں مہر محمد اصغر جوتہ سے ملاقات کی ۔دورہ کرنے کے دوران ڈپٹی ایڈووکیٹ جنرل مہرامتیاز حسین مرالی،ملک محسن اقبال اعوان ،غلام عباس کھوکھر،مہر حق نوازبھکل ،پیرغلام حسین بھی ان کے ہمراہ تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں