8

سفید مکھی کے کنٹرول کیلئے کپاس کے کاشتکار پیلے رنگدار چپکنے والے پھندوں کا استعمال کریں،ڈاکٹر زاہد محمود

ملتان(سٹاف رپورٹر)کپاس کی سفید مکھی کی مینجمنٹ کے لئے کاشتکار کھیتوں میں کپاس کے کاشتکار پیلے رنگدار چپکنے والے پھندوں کا استعمال کریں،یہ بات ڈائریکٹر سنٹرل کاٹن ریسرچ انسٹیٹیوٹ،ملتان نے کپاس کے کاشتکاروں کے نام اپنے اہم پیغام میں کہا ہے،انہوں نے اپنے پیغام میں مزید کہا کہ یہ طریقہ سب سے پہلے سنٹرل کاٹن ریسرچ انسٹیٹیوٹ،ملتان کے زرعی سائنسدانوں نے متعارف کرایا ہے اورکپاس کے کھیت میں سفید مکھی کو کنٹرول کرنے کے لئے لیس دار پیلے رنگدار کارڈ ز/ڈبے کا استعمال کافی مؤثر ہیں،جبکہ یہ پیلے رنگدارڈبے کپاس کے علاوہ دیگر فصلات پر بھی کیڑے مکوڑوں کے کنٹرول میں کافی مددگار ثابت ہوئے ہیں۔ڈاکٹر زاہد محمود کا کہنا تھا کہ پیلا رنگ سفید مکھی کے لئے کشش کا باعث ہے اسی وجہ سے اس پیلے رنگدارڈبے پر گوند نما چپکنے والا لیس دار مادہ لگا کر کپاس کے کھیت میں مختلف جگہوں پر نصب کیا جاتا ہے اور سفید مکھی اس رنگدارڈبے کی کشش سے کھنچتی چلی آتی ہیں اور جیسے ہی وہ ڈبوں پر آکر بیٹھتی ہے تو پھر وہیں چپک کر رہ جاتی ہیں جس کی وجہ سے ان کی افزائش میں خاطر خواہ کمی واقع ہوجاتی ہے،سفید مکھیاں پیلے رنگدارڈبوں پر موجود طاقتور چپکن میں پھنس کر بغیر سپرے کے ہلاک ہو جاتی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ پھندے کپاس کی فصل کے چاروں اطرف اور درمیان میں لگائے جاتے ہیں۔ کپاس کے کاشتکار فی ایکٹر کے حساب سے 8سے10 پیلے رنگدارڈبوں والے پھندے کھیت میں لگائیں۔ڈاکٹر زاہد محمود نے بتایا کہ پیلے رنگدار چپکنے والے ڈبے مارکیٹ میں مختلف سائز میں ملتے ہیں۔ڈبوں کے سائز کے انتخاب کیلئے مخصوص اندازے کے ساتھ حساب کتاب لگایا جاتا ہے۔ اگر ایک ڈبے کا سائز 10×15انچ ہو تو ایک طرف کا رقبہ150 مربع انچ بنتا ہے۔اگر ایک مربع انچ میں 30 سفید مکھی یا سبز تیلہ چپکے تو ایک کارڈ تقریباً 4500 کیڑوں کیلئے کافی ہوگا۔ اب اگر ایک ایکڑ میں کل ڈبوں کی تعداد10 ہو تو ان میں روزانہ کل45000ہزار کیڑے پھنس سکتے ہیں۔ جس سے ان کے انڈے دینے اور افزائش نسل وقت کے ساتھ ساتھ رک جائے گی۔ سفید مکھی کے شدید حملہ کی صورت میں ڈبوں کی تعداد بڑھائی بھی جا سکتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں