18

سیاست کو کرپشن سے آلودہ کرنیوالے دربدرہونگے،عثمان بزدار

لاہور،وزیراعلیٰ عثمان بزدار سے صوبائی وزیر مراد راس،ارکان صوبائی ا سمبلی سمیع اللہ چودھری اور اسد کھوکھر نے ملاقات کی،جس میں باہمی دلچسپی کے امور، سیاسی صورتحال، ترقیاتی منصوبوں اور جنوبی پنجاب کے ڈویلپمنٹ پروگرام پر بات چیت کی گئی،منتخب نمائندوں نے بجٹ کی منظوری پر وزیراعلیٰ کو مبارکباد دی۔ وزیراعلیٰ نے سمیع اللہ چودھری کو بہاولپور میں جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کا سنگ بنیاد رکھنے کیلئے انتظامات کو حتمی شکل دینے کی ہدایت کی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ پنجاب میں پائیدار ترقی کی حقیقی بنیاد رکھ دی ہے اور 560 ارب روپے کے ترقیاتی پروگرام سے ہر ضلع ترقی کرے گا۔ ماضی کی حکومت نے نمائشی منصوبوں پر صوبے کے قیمتی وسائل کو بے دردی سے ضائع کیا اور یہ نمائشی منصوبے کل بھی ’’سفید ہاتھی‘‘ تھے او رآج بھی’’سفید ہاتھی‘‘ ہیں۔ سابق حکمرانوں نے جنوبی پنجاب کے وسائل پر ڈاکہ ڈال کر غیر منصفانہ اقدام کیا جبکہ ہماری حکومت نے جنوبی پنجاب کو نئی شناخت دی ہے۔ ملتان کے بعد جلد ہی بہاولپور جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کا سنگ بنیاد رکھا جائے گا۔ میں پہلی فرصت میں بہاولپور آؤں گا۔ جنوبی پنجاب کے مینڈیٹ کی پہلے بھی لاج رکھی ہے اور آئندہ بھی لاج رکھیں گے۔ پاکستان کی سیاست کو کرپشن سے آلودہ کرنے والے آج در بدر پھر رہے ہیں اور وطن عزیز کو بے دردی سے نوچنے والے نشان عبرت بن چکے ہیں۔ پاکستان کو عمران جیسے لیڈر ہی آگے لے کر جائیں گے۔ وزیراعلیٰ نے سابق نگران وزیراعظم میر ہزار خان کھوسو کے انتقال پر دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔ علاوہ ازیں بزدارنے اپنے تعزیتی پیغام میں میر ہزار خان کھوسو مرحوم کی ملک کیلئے خدمات کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ میر ہزار خان کھوسو کے انتقال سے پاکستان ایک محب وطن شخصیت سے محروم ہو گیا ہے۔ وزیراعلیٰ نے دعا کی کہ اللہ تعالیٰ مرحوم کی روح کو جوار رحمت میں جگہ دے اور سوگوار خاندان کو صبر جمیل عطا فرمائے۔ وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کہا ہے کہ منشیات ایک ناسور ہے۔ منشیات کی لعنت کی وجہ سے سماجی، معاشرتی اور معاشی مسائل جنم لیتے ہیں۔ منشیات کا کالا دھندا کرنے والے انسانیت کے قاتل ہیں۔ تعلیمی اداروں کے باہر منشیات کا کاروبار کرنے والے عناصر کی سختی سے سرکوبی کیلئے ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔ سردار عثمان بزدار نے خانیوال کے علاقے میں اغوا کے بعد بچی کے قتل کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے آر پی او ملتان سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔ دوسری جانب وزیراعلیٰ کی ہدایت پر 560 ارب روپے کے ریکارڈ ترقیاتی پروگرام پر عملدرآمد کیلئے پلان تیار کر لیا گیا ہے۔ چیف سیکرٹری پنجاب جواد رفیق ملک کی زیرصدارت اعلیٰ سطح کا اجلاس ہوا۔ پرنسپل سیکرٹری نے 560 ارب روپے کے سالانہ ترقیاتی پروگرام پر عملدرآمد کیلئے افسروں کو گائیڈ لائنز دیں۔ محکموں کو 31 جولائی تک غیر منظور شدہ سکیموں کو منظور کرانے کی ڈیڈ لائن دی گئی اور محکموں کو غیر منظور شدہ سکیمیں منظور کرانے کیلئے فوری اقدامات کی ہدایت کی گئی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ سکیموں کے آغاز سے مکمل ہونے کا ٹائم فریم مرتب کیا جائے گا۔ 560 ارب روپے کا ایک روپیہ بھی لیپس نہیں ہونا چاہیئے۔ سالانہ ترقیاتی پروگرام کے فنڈز کا بروقت اور شفاف استعمال ہر صورت یقینی بنایا جائے۔ پنجاب کے تاریخ ساز ترقیاتی پروگرام پر عملدرآمد کی خود نگرانی کروں گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں