9

سیکرٹری زراعت ثاقب عطیل کا ڈیرہ،سخی سرور اور کوہ سلیمان میں گندم کی فصل کا معائنہ

ڈیرہ غازیخان(نمائندہ پی این این اردو)سیکرٹری زراعت جنوبی پنجاب ثاقب علی عطیل کا ڈی جی خان،سخی سرور اور کوہ سلیمان کے مختلف علاقوں کا دورہ،محکمہ زراعت کے تحت جاری ترقیاتی سکیموں کا جائزہ،گندم کی فصل اور کھجوروں کے تاریخی باغ کا معائنہ،تفصیلات کے مطابق سیکرٹری زراعت جنوبی پنجاب ثاقب علی عطیل نے ڈی جی خان،سخی سروراورکوہ سلیمان کے مختلف علاقوں کا دورہ کیا،دورہ کے دوران محکمہ زراعت کے تحت جاری ترقیاتی سکیموں کا جائزہ،مٹ چانڈیہ میں گندم کی فصل اور کھجوروں کے تاریخی باغ کا معائنہ کیا،کاشتکاروں کے مسائل سنے اور حل کیلئے یقین دہانی کرائی،کاشتکاروں سے حکومت کی جانب سے سبسڈی پر زرعی مداخل کی فراہمی بارے استفسار کیا،اس موقع پر کاشتکاروں نے کوہ سلیمان کیلئے خصوصی سبسڈی پر گندم،سبزیوں اور چارہ جات کی جدید اقسام کے بیج دینے پر وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان خان بزداراور محکمہ زراعت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ گندم کی پیداوار میں اضافہ کیلئے جدید بیج کی فراہمی،ہائی ویلیو ایگریکلچر کے فروغ،واٹر مینجمنٹ اور سوائل کنزرویشن سکیموں پر سبسڈی نے زراعت میں نئی روح پھونک دی ہے،سیکرٹری زراعت جنوبی پنجاب ثاقب علی عطیل نے کوہ سلیمان کے علاقہ سرتھوخ میں کاشتکاروں کے اجتماع سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پہاڑی علاقوں میں زراعت کو جدید خطوط پر استوار کرکے یہاں کے کاشتکاروں کی مالی حالت کو سنوارا جارہا ہے،انہوں نے مزید کہا کہ کوہ سلیمان میں یونین کونسل کی سطح پر 30 ملین روپے کی لاگت سے محکمہ زراعت توسیع کے 10 نئے دفاتر قائم کئے جارہے ہیں،تاکہ مقامی سطح پر کاشتکاروں کی رہنمائی میں مزید بہتری لائی جاسکے،انہوں نے مزید کہا کہ کوہ سیلمان میں 189ملین روپے کی لاگت سے زراعت کی ترقی کا مربوط منصوبہ جاری ہے،جس کے تحت کاشتکاروں کو 90فیصد سبسڈی پر گندم، چارہ جات کی جدید اقسام کے بیج،پھلدار پودوں کی اعلیٰ اقسام اورموسم سرما وگرما کی سبزیوں کے بیج مفت فراہم کئے گئے ہیں،انہوں نے کہا کہ پہاڑی زراعت  کے فروغ میں آبپاشی کیلئے پانی کی فراہمی اہم مسئلہ ہے جس کیلئے کاشتکاروں کو بھرپور فنی رہنمائی ومالی معاونت فراہم کی جارہی ہے، شعبہ واٹر مینجمنٹ اور سوائل کنزرویشن کے تحت پانی ذخیرہ کرنے کیلئے تالاب تعمیر کئے جارہے ہیں،تاکہ کاشتہ فصلات، سبزیوں اور باغات کی مناسب وقت پر باکفایت آبپاشی کی جاسکے،پہاڑی علاقوں کے حساب سے نئی اریگیشن سکیمیں متعارف کرائی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ پہاڑی علاقہ میں ہائی ویلیو ایگریکلچر کے فروغ کیلئے محکمہ زراعت کے جوائنٹ ونچر کے تحت زیتون،کھجور اور سٹرس کے باغات لگانے کا سلسلہ جاری ہے۔اس منصوبہ کے تحت 35ایکڑ پرسٹرس کے 7ہزار سے زائد پودے،6ایکڑ پر کھجور کی اعلیٰ اقسام کے 804پودے اور75ایکڑ پر زیتون کے ساڑھے 14ہزار سے زائد پودے لگائے جارہے ہیں،کاشتکاروں تک جدید پیداواری ٹیکنالوجی پہنچانے اور انہیں رول ماڈل کے طور پر دیکھانے کیلئے مختلف فصلوں،سبزیات اور باغات کے نمائشی پلاٹس بھی لگائے گئے ہیں،تاکہ کاشتکارعملی نمونہ دیکھ کراس پر پیرا ہوں اور اپنی فی ایکڑ پیداوار اور منافع میں خاطر خواہ اضافہ کرسکیں،سیکرٹری زراعتجنوبی پنجاب نے مزید کہا کہ قیام پاکستان سے لیکر آج تک ذرائع آمد ورفت یہاں کے لوگوں کا بہت بڑا مسئلہ رہا ہے موجودہ حکومت نے ترقیاتی منصوبوں کاجال بچھا کر ذرائع آمدورفت کو سہل بنارہی ہے،روڈ انفراسٹرکچر میں بہتری لاکرفارم سے مارکیٹ تک زرعی اجناس کی رسائی کو یقینی بنایا جارہا ہے،سیکرٹری زراعت نے متعلقہ افسران کو ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ زرعی شعبہ کی ترقی اور کسانوں کی خوشحالی کیلئے جاری سکیمیں مقرر کردہ مدت میں مکمل کی جائیں اور ان کے معیار پر کسی قسم کا سمجھوتہ نہ کیا جائے،ان حکومتی اقدامات کے نتیجہ میں قبائلی علاقوں کے کاشتکاروں کی پسماندگی دور ہوگی اور ان کا معیار زندگی بلند ہوگا،اس موقع پر ڈائریکٹر زراعت توسیع مہر عابد حسین،ڈپٹی ڈائریکٹر غلام محمد،اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت انفارمیشن عبدالصمد،اسسٹنٹ اکاونٹس آفیسر بہادر حسین خان سمیت دیگر افسران بھی موجود تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں