16

شاہ محمود کا کینیا کی وزیر خارجہ کیساتھ رابطہ، افغانستان کی صورتحال پر تبادلہ خیال

اسلام آباد(بیورو رپورٹ)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کینیا کی وزیر خارجہ ریچل اومامو کے ساتھ ٹیلیفونک رابطہ کیا، جس میں اقتصادی تعاون، افغانستان کی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا،وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ماہ اکتوبر کیلئے سکیورٹی کونسل کی صدارت کا منصب سنبھالنے پر کینیا کی وزیر خارجہ کو مبارکباد دی، دونوں وزرائے خارجہ کے مابین افغانستان کی ابھرتی ہوئی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال ہوا،اس موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ پاکستان کینیا کے ساتھ دو طرفہ تعلقات کو خصوصی اہمیت دیتا ہے، انگیج افریقہ پالیسی، ہماری حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے، پاکستان کینیا کے ساتھ اقتصادی، تجارتی و دفاعی تعاون کے فروغ کیلئے پرعزم ہے،شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہمسایہ ہونے کے ناطے افغانستان میں انسانی و معاشی بحران پر گہری تشویش ہے، عالمی برادری افغانوں کو انسانی و معاشی معاونت کی فراہمی کیلئے ٹھوس اقدامات اٹھائے،وزیر خارجہ نے کینین ہم منصب سے نیروبی میں موجود سعودی عرب جانے کے منتظر پاکستانیوں کی معاونت کی درخواست کی جس پر کینین وزیر خارجہ نے نیروبی میں سعودی عرب جانے کے منتظر پاکستانیوں کی معاونت کی یقین دہانی کرائی،وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ پاکستان کینیا کے ساتھ کثیر الجہتی شعبہ جات میں دو طرفہ اقتصادی، تجارتی و دفاعی تعاون کے فروغ کیلئے پر عزم ہے،ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق وزیر خارجہ نے کینیا کے ہم منصب ریچل اومامو کے ساتھ ٹیلیفونک رابطہ کیا۔دونوں وزرائے خارجہ کے درمیان دو طرفہ تعلقات، تجارتی و اقتصادی تعاون،افغانستان کی ابھرتی ہوئی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال ہوا،وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان کینیا کے ساتھ دو طرفہ تعلقات کو خصوصی اہمیت دیتا ہے، انگیج افریقہ پالیسی ہماری حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے،انہوں نے کہا کہ پاکستان کینیا کے ساتھ کثیر الجہتی شعبہ جات میں دو طرفہ اقتصادی، تجارتی و دفاعی تعاون کے فروغ کیلئے پر عزم ہے،وزیر خارجہ نے ماہ اکتوبر کیلئے سکیورٹی کونسل کی صدارت کا منصب سنبھالنے پر کینیا کی وزیر خارجہ کو مبارکباد پیش کی،دونوں وزرائے خارجہ کے درمیان افغانستان کی ابھرتی ہوئی صورتحال پر بھی تفصیلی تبادلہ خیال ہوا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ قریبی ہمسایہ ہونے کے ناطے افغانستان میں ابھرتے ہوئے انسانی و معاشی بحران پر گہری تشویش ہے،اگر افغانستان میں صورتحال مزید خراب ہوئی تو افغان مہاجرین کی یلغار سمیت بہت سے مضمرات سامنے آئیں گے،ضرورت اس بات کی ہے کہ عالمی برادری افغانوں کو انسانی و معاشی معاونت کی فراہمی کیلئے ٹھوس اقدامات اٹھائے،وزیر خارجہ نے کینین ہم منصب کونیروبی میں موجود، سعودی عرب جانے کے منتظر پاکستانیوں کی فوری معاونت کی درخواست کی،کینین وزیر خارجہ ریچل اومامو نے نیروبی میں سعودی عرب جانے کے منتظر پاکستانیوں کو جلد سعودی عرب بھجوانے کیلئے ہر ممکن معاونت فراہم کرنے کی یقین دہانی کروائی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں