14

ضلع کچہری ملتان میں کلرکس اور وکلا کے درمیان اراضی تنازع میں شدت

ملتان،ضلع کچہری ملتان میں کلرکس اور وکلا کے درمیان جگہ کا تنازع طول پکڑ گیا،وکلا نے کلرکس بار کو غیر آئینی تنظیم قرار دے دیا جبکہ وکلا کلرکوں نے سیشن عدالت کے باہر مظاہرہ کر کے اپنے مطالبہ کے حق میں نعرہ بازی بھی کی،کلرکس بار ایسوسی ایشن کے عہدیداران نے سیش گیٹ سے چوک کچہری تک احتجاجی ریلی بھی نکالی،صدر کلرکس بار رجب شہزاد بھٹہ کا کہنا تھا کہ 20 سال پہلے کلرکس کو دی جانے والی جگہ پر وکلا چیمبر بنانا چاہتے ہیں، کچہری میں 15 سو سے زائد کلرکوں کا اسٹینڈ بھی چھین لیا گیا ہے، ہمیں ہمارے حقوق سے محروم نہ کیا جائے۔کچہری میں جگہ کے تنازعے کے حوالے سے نائب صدر ڈسٹرکٹ بار سید اشتیاق علی شاہ نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کلرکس بار کے پاس جو جگہ ہے اسکی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے،وکلا نے اخلاقی طور پر کلرکس کو یہ جگہ دی ہوئی تھی۔ اس جگہ پر وکلاء کے 100 چیمبرز بننے ہیں۔ کلرکس حضرات اپنے وکلاء چیمبرز کی حدود تک رہ کر کام کریں۔ ان کا مزید کہنا تھا کلرکس کو کسی صورت میں یہ جگہ نہیں دی جائے گی۔ اگر کلرکس نے ڈسٹرکٹ بار کے فیصلے پر کسی بھی قسم کا ردعمل دیا تو قانونی کاروائی کی جائے گی جسکا نوٹیفیکیشن بھی جاری کردیا ہے دوسری جانب وکلاء کے کلرکوں کا کہنا ہے ہم اپنے حقوق کے تحفظ کے لئے ہر جگہ پر اپنا احتجاج ریکارڈ کرائیں گے۔ احتجاج کے بعد بھی کلرکس نے ڈسٹرکٹ بار روم کے سامنے ڈیرے ڈال لئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں