8

غریب مریضوں کو مفت ادویات دینے کیلئے 12 ارب 80 کروڑ روپے خرچ کرنے کا فیصلہ

ملتان،مفت ادویات کی فراہمی کیلئے محکمہ صحت کا اہم فیصلہ،محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر نے آئندہ مالی سال کے بجٹ سے متعلق پلان آف ایکشن تیار کرلیا جبکہ ترجیحات پر مبنی ورکنگ پیپر جاری کردیا گیا ہے، نئے ہیلتھ یونٹس سمیت 12 ارب 80 کروڑ مفت ادوایات کی فراہمی پر خرچ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، مجموعی طور ترقیاتی اور غیر ترقیاتی اخراجات کا حجم 154 ارب 46 کروڑ 80 رکھا گیا ہے جاری کردہ پلان آف ایکشن کے مطابق سرکاری ہسپتال میں فری ادویات کی فراہمی کیلیے 12 ارب 80 کروڑ روپے خرچ ہونگے۔ محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کے لیے مجموعی طور پر 154 ارب 46 کروڑ 80 لاکھ مختص کئے گئے ہیں۔غیر ترقیاتی اخراجات اور مختلف پروگرامز کی تکمیل کی مد میں 137 ارب 25 کروڑ جبکہ ایک سو ایک ارب 24 کروڑ ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹیز کے لیے مختص کیے گئے ہیں،چودہ اضلاع میں پبلک ہیلتھ کی مد میں 5 ارب 50 کروڑ خرچ کرنے کا پلان تیار کرلیا گیا ہے. 6 ارب 45 کروڑ ای پی آئی پروگرام، اور 17 ارب 21 کروڑ کی لاگت سے محکمہ صحت ڈسٹرکٹ ڈویلپمنٹ پیکج کی اسکیموں کو مکمل کیا جاائے گا۔ ڈسٹرکٹ ڈویلپمنٹ پیکج کی نئی اور پہلے سے جاری 468 ترقیاتی اسکیموں پر 4 ارب 83 کروڑ سے مکمل کیا جائے گا۔ملتان، لیہ، راجن پور، اٹک، بہاولپور اور میانوالی میں ایم سی ایچ ہسپتالوں کا قیام ترجیحات میں شامل ہیں۔. 113 نئے بنیادی مرکز صحت کا قیام جبکہ 39 ٹراما سینٹرز کی تعمیر و بحالی کے منصوبے شامل ہیں۔ محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر نے 119 تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتالوں کی بحالی جبکہ 25 ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتالوں کی اپ گریڈیشن کی منصوبہ بندی کرلی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں