4

لودھراں،پی آر ایس پی کے زیر انتظام 53 چھوٹے بڑے ہسپتال بنیادی صحت کی سہولتیں فراہم کرنے میں ناکام

کہروڑپکا،ضلع لودھراں میں پنجاب رورل سپورٹ پروگرام(پی آر ایس پی )کے زیراہتمام چلنے والے48بنیادی مرکز صحت،4رولر ہیلتھ سنٹر اور ایک ٹراما سنٹر عوام کو سہولیات فراہم کرنے میں ناکام ‘ڈسٹرکٹ ہسپتال لودھراں کی ازل سے روش برقرار ہے مریضوں کوبہاولپورریفر کرنے کی اس کے ساتھ ہی لودھراں ضلع کی یونین کونسلوں میں قائم مراکز بھی عرصہ سے ایک مخصوص افرادکے ہاتھوں آیا ہوا ہے جہاں پر پی آر ایس پی میں سوشل آفیسر بھرتی ہونے والے فرد واحد کی اجارہ داری قائم ہے سوشل آفیسر سے ترقی کرنے والا مسعود نبی واہلہ ای ایم او ایگزیکٹو مانیٹرنگ آفیسر،ایڈیشنل ڈسٹرکٹ منیجر اور اب لاہور کے مرکزی آفس میں عرصہ سے تعینات ایک کمپیوٹر آپریٹر سے پل کا کردار ادا کراتے ہوئے مبینہ لاکھوں روپے دیکر مستقل ڈسٹرکٹ منیجر تعینات ہوگیا ہے،ذرائع کے مطابق موصوف نے پہلے بھی اس محکمہ کو یرغمال بنایا ہوا تھا جبکہ بنیادی مراکز صحت اور رولر ہیلتھ سنٹروں پر قیمتی ادویات انسولین،ڈوگ ویکسین کے علاوہ دیگر مخصوص افراد کو دی جاتی ہے جبکہ نادر اور غریب افراد جو ایک تو پہلے ہی پرائیوٹ چیک کرانے کی سکت نہیں رکھتے جبکہ آخری امید کی کرن لیکر جب بنیادی مرکز صحت یا رولر ہیلتھ سنٹر پہنچتے ہیں تو آگے یہاں پر بھی صرف نیلی پیلی گولیاں فراہم کی جاتی ہیں باقی مریضوں کے نام پر لوکل پرچیز کے ہر ماہ لاکھوں روپے کے بل بنادیئے جاتے ہیں لیکن آج تک مریضوں کو لوکل پرچیز کی گئی ادویات فراہم نہیں کی گئی ہیں دلچسپ بات یہ ہے کہ ذرائع کے مطابق80فیصد ادوایات لودھراں کے مخصوص میڈیکل سٹور سے خریدکرنے کا سلسلہ عرصہ سے جاری ہے اور یہ میڈیکل سٹور موجودہ پی آر ایس پی کے ڈسٹرکٹ منیجر کا ہے جہاں سے ہر ماہ بوگس بل بنواکر پاس کرائے جاتے ہیں اگر کوئی ادویات مریضوں کو دینی بھی ہوتو وہ کٹ ریٹ والی دوائی ہوتی ہے جوکہ مارکیٹ سے 70فیصد سستی ملتی ہے اس کے ساتھ ہی ہر ماہ لودھراں کے 48بنیادی مراکز صحت اور 4رولر ہیلتھ سنٹر،ٹراما سنٹر کے لئے جنرل سٹور ایٹم جن میں ڈیٹول،صابن،جھاڑو،ٹوکریاں،برش،فنائل ودیگر شامل ہیں ان کو بھی باہروں باہر ہی لاہور سے منگواکر لودھراں کے ایک مخصوص جنرل سٹور پر فروخت کردیا جاتا ہے ضلع لودھراں کے شہریوں،خالد۔مجاہد،اقبال،تنویر،اعجاز ودیگر نے پی آر ایس پی کے ڈائریکٹر جنرل لاہور سے لودھراں میں ہونے والی بدعنوانیوں کا نوٹس لیتے ہوئے تحقیقات کرکے سخت کاروائی کا مطالبہ کیا ہے،اس بارے موقف دیتے ہوئے مسعود بنی واہلہ نے کہا کہ گورنمنٹ کی طرف سے ادوایات اور سہولیات جو مل رہی ہیں وہ ہم دے رہے ہیں جن چیزوں کی کمی ہے ان کیلئے اعلی افسران کو لکھا ہوا ہے کوشش کی جارہی ہے کے بنیادی سنٹروں پر کسی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں