19

وزیراعظم کو ملنے والے تحائف بتائیں یا نہیں ؟ حکومت نے پھر مہلت مانگ لی

اسلام آباد(بیورو رپورٹ)وزیراعظم کو ملنے والے تحائف بتائیں یا نہیں ؟ حکومت نے پھر مہلت مانگ لی،اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی حکومت کی استدعا پر سماعت ملتوی کر دی،اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے وزیراعظم کو بیرون ممالک سے ملنے والے تحائف پبلک کرنے کے خلاف وفاقی حکومت کی اپیل پر سماعت کی،وفاقی حکومت کی جانب سے اسسٹنٹ اٹارنی جنرل عتیق الرحمان صدیقی نے حکومت سے ہدایات لینے کیلئے مزید مہلت کی استدعا کی جس پر جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ریمارکس دیئے کہ اگر کوئی دفاعی یا نیشنل سکیورٹی سے متعلق تحفہ ہو بے شک نہ بتائیں،لیکن ہر تحفے کو پبلک کرنے پر پابندی کیوں ؟ اگر کسی ملک نے ہار تحفے میں دیا تو پبلک کرنے میں کیا حرج ہے؟۔جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے کہا کہ حکومت دیگر ممالک سے ملنے والے تحائف نہ بتا کر کیوں شرمندہ ہو رہی ہے ؟ حکمرانوں کو ملنے والے تحائف ان کے نہیں بلکہ عوام کے ہیں، اگر کوئی عوامی عہدہ نہ ہو تو کیا عہدوں پر بیٹھے لوگوں کو تحائف ملیں گے ؟ حکومت کیوں تمام تحائف کو میوزیم میں نہیں رکھتی ؟ حکومت کو چاہیے گزشتہ دس سالوں کے تحائف پبلک کر دے، حکومت یہ بھی بتائے کہ کتنے تحائف کا ایف بی آر سے تخمینہ لگوایا ؟ اسسٹنٹ اٹارنی جنرل نے کہا ہائبرڈ وار فئیر کا زمانہ ہے، کچھ لوگ تحائف پر بھی ویڈیوز بنائیں گے،عدالت نے کہا آپ آج کے دور میں معلومات تک رسائی کیسے روک سکتے ہیں ؟ حکومت کو مشورہ دیں فیصلے پر نظر ثانی کرے اور معلومات پبلک کرے، کس ملک نے کتنی محبت سے کیا تحفہ دیا یہ بات عوام کو بتانے سے تعلقات کیسے خراب ہوں گے ؟ عدالت نے وفاقی حکومت کی استدعا پر سماعت ملتوی کر دی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں