27

وزیر خزانہ سے چیئرمین پی سی جی اے کی ملاقات،کاٹن پرعائد ٹیکسسز کے خاتمے کا مطالبہ

چیئرمین پی سی جی اے ڈاکٹر جسومل کی سربراہی میں پی سی جی اے وفد کی وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین سے اسلام آباد میں ملاقات۔وفد نے حالیہ بجٹ میں کاٹن سیڈ آئل پر 17 فیصد سیلز ٹیکس اور کاٹن پر سیلز ٹیکس 10 فیصد سے بڑھا کر 17 فیصد کی تجویز پر تفصیلی گفتگو کی۔چیئرمین نے بتایا کہ جننگ انڈسٹری کاٹن پروڈکشن میں شدید کمی اور پہلے سے لاگو شدہ ٹیکسوں کے باعث اپنی بقاء کی جنگ لڑ رہی ہے اورسابقہ کاٹن سیزن میں 1300کاٹن جننگ یونٹس میں سے صرف 400 یونٹس آپریشنل ہو پائے ہیں۔70 فیصد جننگ انڈسٹری بند پڑی ہے اور حالیہ بجٹ میں مجوزہ ٹیکسوں کے نفاذ سے ٹیکسوں کا بلا واسطہ بوجھ کاٹن کاشتکاروں پر منتقل ہو گا جو کہ پہلے ہی کاسٹ آف پروڈکشن میں اضافہ کے باعث دیگر فصلوں کی طرف راغب ہو رہے ہیں۔کاٹن کاشتکاروں کی حوصلہ افزائی کی بجائے حکومت کی جانب سے حالیہ بجٹ میں مجوزہ ٹیکسوں کے باعث کاٹن کاشتکاروں کی مزید حوصلہ شکنی ہو ئی ہے اور ملک میں کاٹن نا پید ہوتی نظر آرہی ہے۔کاٹن میں کمی بے روزگاری و امپورٹ بل میں اضافہ، جننگ وآئل انڈسٹری کی تباہی اور ملکی ریونیو میں کمی کا باعث بنے گی۔چیئرمین پی سی جی اے نے مطالبہ کیا کہ فی الفور مجوزہ ٹیکسوں کو واپس لیا جائے اور جننگ انڈسڑی پر پہلے سے عائد ٹیکسوں میں کمی کر کے کاٹن کاشتکار کی حوصلہ افزائی اور کاٹن جننگ سیکٹرکی بحالی کی جائے کیونکہ موجودہ حالات کاٹن جننگ سیکٹر کا پہیہ جام کر دیں گے۔وفاقی وزیرخزانہ نے یقین دہانی کروائی ہے کہ زیر عتاب جننگ و آئل انڈسٹری کو مجوزہ ٹیکسوں کے نفاذ سے ریلیف دیا جائے گا۔وفد میں سابق وائس چیئرمین شیخ محمد عاصم سعید، ایگزیکٹو ممبر خواجہ محمد ارشد کے ہمراہ وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی امور ملک عامر ڈوگر و اندھ کے ایم این اے جے پرکاش بھی شامل ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں