4

پنجاب پولیس میں فرنٹ ڈیسک پر کام کرنے والے عملے کی 5 سال سے تنخواہیں نہ بڑھ سکی

ٹھٹھہ صادق آباد(نمائندہ پی این این اردو) پنجاب پولیس میں عوام کی سہولت،کرپشن کے خاتمہ اور تھانہ کلچر میں مؤثر تبدیلی کیلئے 2014 میں فرنٹ ڈیسک کے نام سے پروجیکٹ کا آغاز کیا گیا تھا جس میں ابتدائی طور پر لاہور کے 10 تھانوں میں سویلین عملہ آئی ٹی گریجویٹ کنٹریکٹ پر بھرتی کیا گیا تھا،پروجیکٹ کو مؤثر جانچتے ہوئے مارچ 2016 میں پروجیکٹ کا دائرہ کار صوبہ بھر کے 300 تھانہ جات تک وسیع کیا گیا اور مزید سویلین عملہ کنٹریکٹ پر بھرتی کیا گیا تھا۔اوراسی طرح ستمبر 2016 میں اس پروجیکٹ کا دائرہ کار صوبہ بھر کے تمام تھانہ جات میں نافذ العمل کیا گیا اور سویلین عملہ کی تعداد بتدریج بڑھ کر 2400 تک جا پہنچی۔جو کہ مزید بھرتیوں کے بعد اب مجموعی تعداد 3000 کے لگ بھگ ہے،بوقت بھرتی ایس ایس اے کی تنخواہ بتیس ہزار روپے اور پی ایس اے کی تنخواہ پچیس ہزار روپے مقرر کی گئی جو عرصہ تقریباً 5 سال گزرنے کے بعد بھی اسی تنخواہ پر کام کر رہے ہیں جبکہ تا حال عملہ فرنٹ ڈیسک کے لیے کس قسم کا کوئی سروس سٹرکچر و سکیل کا تعین نہ کیا گیا ہے۔اور نہ ہی تنخواہ میں کسی قسم کا کوئی اضافہ کیا گیا ہے جبکہ کنٹریکٹ ختم ہونے پر تنخواہ بند کر دی جاتی ہے۔عملہ شدید مایوسی اور اضطراب کا شکار ہو کر دلبر داشتہ ہو چکا ہے۔پنجاب پولیس فرنٹ ڈیسک کے ملازمان نے مطالبہ کیا ہے کہ انہیں مستقل کیا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں