4

پوائنٹ آف سلیز ٹیکس جیسے کالے قانون کو کسی صورت قبول نہیں کریں گے،قومی تاجر اتحاد پاکستان

ملتان(سٹاف رپورٹر)پوائنٹ آف سلیز ٹیکس جیسے کالے قانون کوکس صورت بھی قبول نہیں کریں گے،ایف بی آر آئے روز چھوٹے تاجروں پر نئے نئے ٹیکس لگانے کا تجربہ نہ کرے اس پر وقت ضائع کر نے کے بجائے نئے لوگوں کو ٹیکس ننیٹ میں لائیں،اس سے عوام پر ٹیکسوں کا بوجھ کم پڑے گا،ان خیالات کا اظہار قومی تاجر اتحاد جنوبی پنجاب پاکستان کے صدر سلطان محمود ملک،ملک اکرم سگو،ملک مقبول کھوکھر،ملک اقبال جاوید،سید آصف شاہ۔شیخ محمد سلیم،ملک امجد سیال نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا،اجلاس میں ملک اقبال ڈوگر ۔شیخ محمد عمر ۔مسعوداحمدخان،ملک محمد صابر،ملک زیبر نعیم،ملک تنویر احمد اعوان،ملک الطاف لنگاہ،چوہدری عامر بن طارق،شوکت بھٹی،ملک منیر احمد لکھویراور دیگر تاجروں نے شرکت کی،اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے قومی تاجر اتحاد جنوبی پنجاب پاکستان کے صدر سلطان محمود ملک نے مزید کہا 1000مربع فٹ کی دوکانوں پر پوائنٹ آف سلیز مشین کا لگانا تاجروں کے لئے قابل قبول نہیں اس سے ایف بی آر کا کرپٹ عملہ تاجروں کے لئے وبال جان بن جائے گا، بلیک میلنگ اور رشوت کا ایک نیا راستہ مل جائے جس سے تاجروں اور ایف بی آر میں عدم تعاون پیدا ہونے کا خطرہ دیا،انہوں نے کہا کہ جہاں بڑی بڑی ملٹی نیشنل کمپنیاں اربوں روپے کا سیلز ٹیکس ایف بی آر کے کرپٹ عملہ کی ساز باز سے چوری کر رہی ہیں،وہاں پر ایف بی آر کا محکمہ کیوں توجہ نہیں کرتا اگر وہاں پر کیمروں کے ذریعہ مانیٹرنگ کی جائے تو اربوں روپے کا ٹیکس چوری ہونے سے بچایا جا سکتا ہے قومی تاجر اتحاد پاکستان ایک عرصہ سے مطالبہ کر رہا ہے ہم چھوٹے تاجر ایمانداری سے ٹیکس ادا کر رہا ہے اگر ٹیکس چور پکڑنے ہیں تو بڑے بڑے مگر مچھوں پر ہاتھ ڈالنے کی ضرورت ہے اورایف بی آر کے فرسودہ نظام کی تبدیلی بے حد ضروری عمران خان اس سلسلہ میں ایف بی آر کے نظام کی تبدیلی کا کہا چکے ہیں پر کرپٹ افسران اس میں رو کاٹ ہیں اگر ایف بی آر نے اس کالے قانون کو واپس نہ لیا اور زبردستی پوائنٹ آف سلیز مشین نصب کر نے کی کوسش کی تو دم دم مست قلندر ہو گا اور قومی تاجر اتحاد پاکستان ملک بھر میں احتجاجی تحریک چلانے پر مجبور ہوگا.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں