2

پولیس اجتماعی زیادتی کے ملزمان پر مہربان، خاتون کو دھکے، تھانے سے نکال دیا

کہروڑپکا(نمائندہ پی این این اردو) شادی شدہ خاتون کے ساتھ زیادتی پولیس ملزمان پر مہربان،خاتون کو دھکے دے کر تھانے سے نکال دیا، عدالت کے حکم پر مقدمہ تو درج ہوا لیکن تین ملزمان کو ریلیف دے کر ایف آئی آر کی کہانی تبدیل کر دی میڈیکل میں زیادتی ثابت ہونے کے باوجود پولیس نے ملزمان کو عبوری ضمانتوں کا موقعہ فراہم کیا، رخسانہ بی بی کا آئی جی پنجاب سے انصاف فراہم کرنے کا مطالبہ،تفصیلات کے مطابق رخسانہ بی بی نے میڈیا سے بات کر تے ہوئے کہا کہ میں 22-05-2021تقریباً10/11بجے دن گھاس ٹاٹ کر آرہی تھی جبکہ مکئی کی فصل کے نزدیک پہنچی تو آتشیں اسلحہ سے لس تسلیم،ساجد شاہ،اور تین معلوم افراد نے مجھے دبوچ لیا اور زیادتی کی، ساجد شاہ،دیگر ملزمان کا پیرہ دیتا رہا۔رخسانہ بی بی نے مزید بتایا کہ میں نے تھانہ سٹی کہروڑپکا کو درخواست دی تو پولیس نے میری فریاد نہ سنی۔بعد میں میں نے عدالت عالیہ میں اندراج مقدمہ کیلئے رٹ دائر کی۔بعد میں پولیس نے عدالت کے حکم پر مقدمہ تو درج کر دیا لیکن ملزمان سے ساز باز ہو کرالف ائی آر کی تمام کہانی تبدیل کر کے ملزمان کو ریلف دیا۔رخسانہ بی بی نے مزید بتایا کہ جب ہم تھانے جاتے ہیں ایس ایچ او اور تفتیشی سب انسپکٹر مقصود احمد اور محر ر عبا د توہین آمیز رویہ سے پیش آتے ہیں۔اور ہمیں ملزمان سے صلح کر نے کا دباؤ ڈالتے ہیں۔ملزمان بااثر ہیں انکو پولیس اور سیاسی وڈیروں کی پشت پناہی حاصل ہے۔ مجھے انصاف فراہم کیا جائے اور میرے ملزمان کوگرفتار کر کے سخت سے سخت سزا دلوائی جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں