110

گورنر پنجاب ،وزیر اعلیٰ اور وفاقی وزیر برائےخارجی امور ایک دوسرے سےدور،دورے اختلافات کھل کر سامنےآگئے؟؟؟؟؟؟ْ جنوبی پنجاب کی آواز ۔۔اختر شیخ


گورنر پنجاب ،وزیر اعلیٰ اور وفاقی وزیر برائےخارجی امور ایک دوسرے سےدور،دورے اختلافات کھل کر سامنےآگئے؟؟؟؟؟؟ْ
جنوبی پنجاب کی آواز ۔۔اختر شیخ
جولائی کے پہلے ہفتے میں ملتان میں سیاسی سرگرمیاں عروج پر رہیں،گورنر پنجاب چوہدری سرور،وزیر اعلی عثمان بزدار اور وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اوپر تلے ملتان آئے اور گئے مگر دلچسپ بات یہ ہے کہ تینوں حکمران جماعت کے اہم رہنما ایک دوسرے سے دور دور ہی رہے ۔ان دوریوں کو تقویت ا سوقت ملی جب گورنر پنجاب نےاپنی پرائیویٹ محفل میں پنجاب کے اہم عہدہ پر فائز شخص کو بودا قرار دے کر اسے پارٹی کےلئے بے سود بھی کہا۔
ملتان میں سب سےپہلے وزیر اعلی عثمان بزدار تشریف لائے چھ تاریخ کو وہ ملتان آئر پورٹ پر پہنچے اور وہاں سے اپنےگھر ایم پی ایس روڈ چلے گئے جہاں سےوہ اگلےدن ڈیرہ غازی خان کیلئے روانہ ہوگئے،ملتان آئر پورٹ پر انہوں نے افسران اور چند ارکان اسمبلی کےساتھ ہلکی پھلکی میٹنگ کی ان کے جاتے ہی آٹھ جولائی کو گورنر چوہدری سرور سابق ضلع ناظم ملتان اور انڈسٹریل لسٹ میاں فیصل مختار کے پرائیویٹ طیارہ پر ملتان آئے اور انہوں نے میاں فیصل مختار کے ایک پرائیویٹ ہسپتال کا دورہ کر کے وہاں انتظامات کو دیکھا جس کے بعد وہ انسداد تشدد سنٹر برائےخواتین گئے جس کے بعد ڈی ایچ اےمیں مینگو فیسٹول کی افتتاحی تقریب میں شریک ہوئے(’’سوشل میڈیا پر اس تقریب کو مقتول آموں کےباغات کی قل خوانی اسکے قاتل کےگھر میں قرار دیا گیا ) جس کےبعد وہ شہر میں مختلف تقاریب میں شریک رہے اوردو دن ملتان میں گزارنے کے بعد جس میں ایک دن سرکٹ اور میاں فیصل مختار کےگھر میں قیام بھی شامل ہے کے بعد لاہور کےلیے اسی طیارہ پر روانہ ہوئے جس پر وہ ملتان آٗے تھے ۔وزر خارجہ شاہ محمود قریشی بھی اس دوران ملتان آئے تاہم ان کا شیڈول اس طرح تھا کہ وہ بھی افسران کی میٹنگ کرتے اور ایک دن قیام کے بعد فوری نکل گئے تینوں اہم عہدیدار ایک دوسرے سے نہیں ملے اور چھ سے دس تاریخ تک اپنی مصروفیا ت اس طرح مرتب کرائیں کہ ایک دوسرے کامنہ تک ہی نہیں دیکھ پائے۔وزیر اعلی عثمان بزدار نے اپنے دورہ کے دوران ڈیرہ غازی خان میں چھ اہم انتظامی افسران جن میں ماضی میں ان کی مرضی سے ہی تعینات ہونے والے ڈائریکٹر اینٹی کرپشن بھی شامل تھے کو ایس ڈی او بنا کر چلےگئے۔وزیر خارجہ نے میپکو کے اہم تبادلوں کے لئےچیف ایگزیکٹو آفیسر میپکو انجینئر اکرام الحق کو ہدایات دیں جن پر عملدرآمد کی پرچیاں انہیں گھر پپہنچائی گئیں اس کے ساتھ کچھ انتظامی احکامات دے کر چلتے بنے۔گورنر چوہدری سرور نےتاہم کچھ سیاسی سرگرمی دکھائی اور پارٹی کے عہدیداروں سےملے ان میں ضلع صدر خالد جاوید وڑائچ پر ملاقات کےدوران انہوں نے قبضہ گروپ کی سرپرستی کر نے پر سخت تنقید بھی کی اور کہا کہ وہ ایسے افراد کو پارٹی کےاہم عہدوں پر دیکھنا پسند نہیں کرتے جبکہ انہوں نے پرائیویٹ گفتگو کرتے ہوئے پنجاب کے اہم عہدہ پرفائز سیاسی شخصیت کو بودا قرار دے کر اپنا غصہ بھی نکالا ۔
ان حالات میں یہ لگتا ہے کہ پنجاب اور خاص طور پر جنوبی پنجاب کی سیاسی شکل و صورت میں مستقبل قریب میں کوئی واضح تبدیلی ہوتی نظر نہیں آرہی تاہم پنجاب میں مستقبل کی حکمران جماعت یاجماعتوں کا منظر نامہ کچھ تبدیل ہوتا محسوس نظر آرہاہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں